Please follow and like us:

قانونی طور پر باپ بیٹے کے 18 سال تک اس کو خرچہ نان و نفقہ دینے کا پابند گزرتے مگر اگر باپ صاھب حثیت ھو اور بیٹا 18سال سے زاید عمر کا ھو جائے مگر ابھی تعلیم حاصل کرہا ھو تو کیا باپ اس صورت میں تعلیمی اخراجات ادا کرنے کا پابند ہوگا۔
اب اس سوال کا جواب دیکھتے ھیں۔.
محمدن لا کی دفہ 369 میں خرچہ نان و نفقہ کی تعریف کی گی ہے ۔جس کے تحت نان و نفقہ میں نابالغ کی خوراک ..لباس اور گھر شامل ہے ۔۔جبکے دفہ 370 میں قرار دیا گیا ہے کے باپ بیٹے کے بالغ ہونے تک ( date of majority) خرچہ نان و نفقہ دینے کا پابند ہے . جبکے majority act کی دفع 3 میں age of majority اٹھارہ سال بیان کی گی گزرتے . جبکے سپریم کورٹ نے اپنے فیصلہ pld 2013 sc 557 .میں قرار دیا ہے کے چاھے بیٹا تعلیم حاصل کرہا ھو پھر بھی باپ 18 سال تک خرچہ دینے کا زمیدار ھوگا .. تاہم اگر بیٹا اپاہج ہوگا تو باپ اس کے تندرست ہونے تک خرچہ دینے کا پابند ھوگا.

Please follow and like us:

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *